Baap ki Pagri – باپ کی پگڑی

کرنے لگتی ہے اظہار پھر باتوں میں ٹال دیتی ہے
نا جانے کیوں وه اپنی محبت کو روز چُھپا لیتی ہے

پکڑوں جو کبھی ہاتھ اسکا تو خوب ملال کرتی ہے
نا جانے کیوں وه اپنی محبت کو روز چُھپا لیتی ہے

دل ہی دل میں وہ بھی میرے حال پہ مرتی ہے
نا جانے کیوں وه اپنی محبت کو روز چُھپا لیتی ہے

توڑى جو آج اُس نے خاموشى تو بولى میرے باپ کی پگڑی روز سوال کرتی ہے
تب سمجھا میں کیوں اپنى محبت کو وہ روز چُھپا لیتی ہے


Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s